پہلا بچہ بہن بھائیوں سے زیادہ سمجھدار

پہلا بچہ، چاہے وہ بیٹا ہو یا بیٹی، ماں باپ کی آنکھ کا تارا ہوتا ہے۔ لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ والدین دوسرے، تیسرے اور اس کے بعد آنے والے بچوں پیار نہیں کرتے۔ ان کے دل میں تو سب بچوں کی محبت یکساں ہوتی ہے۔ مگر پہلے بچے کو ملنے والی مکمل توجہ بعد میں آنے والے بچوں کو نہیں مل پاتی اور ماہرین کے مطابق اسی وجہ سے بڑے بچہ زیادہ ذہین اور سمجھدار ہوتا ہے۔

یونیورسٹ آف ایڈنبرا، اینالسز گروپ اور یونیورسٹی آف سڈنی کے ماہرین معاشیات کی تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ پہلے بچے میں سیکھنے اور سمجھنے کی صلاحیت عمر میں چھوٹے بہن بھائیوں کی نسبت زیادہ ہوتی ہے۔ اس تحقیق کے دوران تقریباً 5000 بچوں کا قبل از پیدائش سے 14 سال کی عمر تک مختلف عوامل کو پرکھا گیا جس میں خاندانی پس منظر اور معاشی حالات بھی شامل تھے۔

محققین نے پہلے پیدا ہونے والے بچوں میں پڑھنے اور تصاویر کو پہچاننے کی شرح جانچی جو دیگر چھوٹے بہن بھائیوں کے مقابلے میں زیادہ رہی۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ خاندان کا پہلا بچہ نہ صرف تعلیم کے میدان میں آگے رہتا ہے بلکہ کاروبار اور ملازمت میں بھی ترقی کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ سال 2009ء میں بھی اس حوالے سے ایک تحقیق کی جاچکی ہے جس سے پتہ چلا کہ بڑے بچوں پر تعلیم اور پیشہ وارانہ میدان میں کامیابی کے لیے سب سے زیادہ دباؤ ہوتا ہے۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں