27 دل کے دورے پڑے مگر مریض پھر بھی زندہ

دل کے دورہ کا سن کر ہی روح کانپ جاتی ہے تو سوچیئے جس کو یہ دورہ پڑتا ہوگا اس پر کیا کچھ گزرتی ہوگی۔ عام طور پر یہی دیکھا گیا ہے کہ لوگ دل کا دورہ پڑنے پر ہی انتقال کر جاتے ہیں لیکن بھئی جسے اللہ رکھے اسے کون چکھے۔ ایک انگلستانی شخص کو ایک ہی دن میں 27 دل کے دورے پڑے اور پھر بھی وہ زندہ سلامت موجود ہیں۔

انگلستان کے علاقے مغربی مڈلینڈز سے تعلق رکھنے والے 54 سالہ روئے وڈہال فٹ بال کھیل رہے تھے کہ اچانک چکرا کر گر پڑے۔ پہلے پہل انہیں خیال آیا کہ پانی کی کمی یا کمزوری کے باعث نڈھال ہو کر گرے ہیں اس لیے انہیں اسٹریچر پر ڈال کر گاڑی تک لے جایا گیا۔ اس فٹ بال میچ کے شائقین میں ایک نرس بھی موجود تھے جنہوں نے روئے کی حالت دیکھ کر ایمبولنس طلب کرلی۔

طبی معالجین نے بتایا کہ بزرگوار کو دل کا دورہ پڑا ہے اس لیے انہیں فی الفور ووسٹرشائر رائل اسپتال منتقل کردیا گیا۔ بات یہیں پر ختم نہیں ہوئی بلکہ اسپتال پہنچنے سے پہلے دل کا دورہ برداشت کرنے والے روئے وڈہال کو اسپتال پہنچنے کے بعد مزید 26 دورے پڑے۔ انہیں امراض قلب کے ماہرین کی ٹیم فوراً آپریشن تھیٹر لے گئی اور وہاں ان کی شریانوں میں خون کا بہاؤ تیز کرنے کا انتظام کیا گیا۔ مریض کے خاندان کو حالات کی نزاکت بیان کرتے ہوئے خبردار کردیا گیا کہ شاید وہ جانبر نہ ہوسکیں اور اگر بچ بھی گئے تو ان کے دماغ کو شدید نقصان پہنچنے کا خدشہ ہے۔

اس کے باوجود اسپتال کے عملے نے پوری تندہی کے ساتھ مریض کی جان بچانے کی کوششیں جاری رکھیں اور بالآخر ان کی یہ محنت رنگ لے آئی۔ ایک ایسا شخص کہ جسے پہلے کبھی دل کا دورہ نہ پڑا ہو، کو اتنے شدید حملے سے بچ جانا کسی معجزے سے کم نہیں ہے۔ روئے وڈہال کی حالت اب خطرے سے باہر بتائی جارہی ہے اور وہ آہستہ آہستہ روبہ صحت ہورہے ہیں۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں