اسپورٹس سے منسلک مسلمان خواتین کے لیے نائیکی کے حجاب

کھیل کے لیے ملبوسات اور جوتے بنانے والے دنیا کے معروف ادارے 'نائیکی' نے اگلے سال سے مسلمان خواتین کے لیے حجاب فروخت کرنے کا اعلان کردیا ہے۔

روایتی حجاب سے ملتا جلتا نائیکی کا حجاب خاص طور پر ان خواتین کے لیے ہے جو اسپورٹس سے وابستہ ہیں۔ یہ بالکل ہلکے پھلکے مواد سے تیار کیا گيا ہے۔

پرو حجاب نامی یہ پروڈکٹ گزشتہ ماہ نائیکی کی جانب سے بنائے گئے ایک اشتہار میں بھی پیش کی گئی جس میں مسلمان خواتین کو دوڑتے، باکسنگ لڑتے، اسکیٹ بورڈنگ کرتے اور دیگر سرگرمیوں میں شامل دکھایا گیا ہے۔ اس اشتہار کو مختلف حلقوں بالخصوص مسلمانوں کی جانب سے تنقید کا نشانہ بنایا گیا کیونکہ یہ مسلم خواتین کی غلط نمائندگی اور تصویر کشی کرتا ہے۔ لیکن نائیکی کا اصرار ہے کہ ان مصنوعات کو مشرق وسطیٰ میں کھلاڑیوں نے ٹیسٹ کیا ہے تاکہ یقینی بنایا جائے کہ یہ ثقافتی ضروریات کو پورا کرتی ہیں۔

نائیکی اب ان عالمی فیشن برانڈز میں شامل ہو چکا ہے جو مسلم فیشن کو قبول کر رہے ہیں۔ فروری 2016ء میں یونیکلو نے فیشن ڈیزائنر ہانا تاجیما کے ساتھ مل کر ایک کلیکشن جاری کی تھی جس میں حجاب بھی شامل تھے۔

معروف معاشی میڈیا بلوم برگ کے مطابق 2015ء میں مسلمانوں کی جانب سے ملبوسات پر کیے گئے اخراجات 243 ارب ڈالرز تھے۔ مسلمان اس وقت دنیا کی کل آبادی کا 23 فیصد ہیں اور 2050ء تک یہ آبادی بڑھ کر 30 فیصد تک پہنچ جائے گی۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں