کامیاب ہونا چاہتے ہیں؟ ان 5 عادتوں سے پرہیز کریں!

دنیا کا ہر شخص کامیاب ہونا چاہتا ہے۔ تعلیم کا میدان ہو یا پیشہ وارانہ مہارت کا، ہر شخص خود کو دوسروں سے آگے اور کامیاب ترین فرد کے طور پر منوانا چاہتا ہے۔ کامیابی حاصل کرنا مشکل ضرور ہے لیکن ناممکن نہیں۔ اس کے لیے جہاں محنت، دیانت، مستقبل مزاجی جیسی عادتوں کو اپنانا پڑتا ہے وہیں چند ایسی عادتوں کو ترک بھی کرنا پڑتا ہے جو غیر محصوس طریقے سے آپ کی کامیابی میں رکاوٹ کھڑی کرتی چلی جاتی ہیں۔ آج ہم ایسی ہی چند عادتوں سے متعلق آپ کو بتارہے ہیں، جنہیں ہر اس شخص نے ترک کیا جو زندگی میں کامیاب ہونا چاہتا ہے۔

جھوٹ اور بہانے بازی
کوئی بھی کامیاب شخص دیر سے پہنچنے پر ٹریفک میں پھنس جانے یا موٹر سائیکل پنکچر ہوجانے کا بہانہ نہیں کرتا۔ اور اگر کوئی ایسا کرتا ہے تو دراصل وہ اپنی ایک کمزوی کا اظہار کر رہا ہے جو اس کی کامیابی کی راہ میں رکاوٹ بن سکتی ہے۔ کسی بھی کام کو مقررہ وقت پر انجام نہ دے پانا باعث شرمندگی ہے لیکن اس سے بھی زیادہ افسوس کی بات بہانے تراشنا ہے۔ کامیاب ہونا چاہتے ہیں تو سچائی کا سامنا کرنا سیکھیں اور جھوٹ، الزام تراشی یا بہانے بازی سے پرہیز کریں۔

اندھا دھند کوششیں
پہلی کوشش میں ناکامی کا منہ دیکھنا پڑے تو حوصلہ نہ ہاریں اور تب تک کوشش کرتے رہیں جب تک کامیابی آپ کے قدم نہ چوم لے۔ لیکن اس ضمن میں ایک بات کا خیال رکھیں کہ آپ کی ہر کوشش پہلے سے زیادہ بہتر انداز اور حکمت عملی کی حامل ہونی چاہیے۔ اس لیے اندھا دھن کوشش سے پرہیز کریں اور پہلی کوشش میں ناکامی کی وجوہات غور کریں، راستے میں آنے والی رکاوٹوں کو ہٹائیں، کسی قسم کی کمی ہو تو اسے پورا کریں اور پھر دوبارہ کوشش کریں۔

اجازت کا انتظار
کسی بھی کام کو انجام دینے کا ایک وقت ہوتا ہے اور وقت گزرجانے کے بعد بہت سے کام بے معنی ہوجاتے ہیں۔ اس لیے وقت ضائع کیے بغیر اہم کام سب سے پہلے اور ترجیح کی بنیادی پر کریں۔ کسی سے اجازت یا مشورہ درکار ہو تو ضرور لیں لیکن اس کی وجہ سے کام کرنے میں تاخیر نہیں ہونی چاہیے۔ اگر آپ کسی کے ماتحت کام کر رہے ہیں اور درمیان میں کوئی پیچیدہ مشکل پیش آجائے تو اسے اپنے تجربہ اور صلاحیتوں کی بنیاد پر حل کریں۔ امید ہے کہ آپ کو اس پر زبردست داد ملے گی۔

پزیرائی اور توجہ کی طلب
کام اتنی خاموشی سے کریں کہ آپ کی کامیابی خود شور مچادے۔ کچھ لوگ ہر کام کے بعد جشن منانا اور دوسروں سے تعریفی کلمات سننے کے خواہشمند رہتے ہیں۔ اگر آپ کے اندر بھی ایسی خواہش بیدار ہوتی ہے تو اس سے آج ہی چھٹکارا پائیں۔ کیوں کہ آپ کی کامیابی دوسروں کی پزیرائی پر منحصر نہیں بلکہ بلکہ خود آپ کی دلی تسکین سے ہے۔ ہمہ وقت لوگوں کی توجہ کا مرکز بنے رہنا بھی آپ کو آگے بڑھنے سے روکنے کی وجہ بنتی ہے اس لیے صرف اپنے آپ کو مطمئن رکھیں اور آگے بڑھیں۔

تنقید، اختلاف کا خوف
کامیاب شخصیات کبھی بھی یہ نہیں سوچتا کہ لوگ کیا کہیں گے؟ لوگوں کی سوچ آپ سے مختلف ہوسسکتی ہے اور وہ آپ کے کام پر تنقید، اس سے اختلاف بھی کریں گے لیکن اس خوف سے اپنے کام سے دستبردار ہوجانا عقلمندی نہیں ہے۔ اس سے بہت زیادہ بہتر ہے کہ آپ اختلاف کو مثبت انداز میں لیں اور لوگوں کی آراء سے اپنے کام کو بہتر بنانے کی کوشش کریں۔ اس دوران آپ کو گرما گرم بحث یا پھر مشکل فیصلے بھی لینے پڑیں تو اس سے گھبرانا نہیں چاہیے۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرے

تبصرہ کریں