فضائی سفر میں برقی آلات ساتھ رکھنے پر پابندی

امریکا جانے والی پروازوں میں مسافروں کو برقی آلات ساتھ رکھنے سے منع کردیا گیا ہے جس کے بعد موبائل فون اور ضروری طبی آلات کے سوا لیپ ٹاپ، ٹیبلیٹ، آئی پیڈ اور کیمرہ سمیت بیٹری سے چلنے والی کوئی بھی ڈیوائس دوران سفر ساتھ نہیں لے جائی جاسکتیں۔

امریکی حکومت کی جانب سے لگائی گئی اس پابندی کا اطلاق مشرق وسطی اور شمالی افریقہ کے مسلم اکثریتی ممالک کے 12 فضائی اداروں پر ہوگا۔ جن ممالک کے فضائی اداروں پر یہ پابندی لگائی گئی ہے ان میں سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، مصر اور اردن شامل ہیں۔ ان اداروں میں امارات، قطر ایئرویز، ساؤتھ افریکن ایئرویز، اتحاد ایئرویز کے شامل ہونے کا امکان ہے۔ امریکی فضائی اداروں کو اس پابندی سے مستثنی قرار دیا گیا ہے۔

اب تک اس پابندی کا باضابطہ اعلان نہیں کیا گیا اور امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ امریکی حکام آج، منگل کے روز اس بارے میں مزید تفصیلات سے آگاہ کریں گے۔

رائل جورڈینین ایئرلائنز نے گزشتہ روز ایک ٹویٹ کے ذریعے اپنے مسافروں کو اس پابندی سے متعلق آگاہ کیا تھا کہ امریکا جانے والے مسافروں کو فضائی سفر کے دوران برقی آلات ساتھ رکھنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔ بعد ازاں یہ ٹویٹ نامعلوم وجوہات کی بنا پر یہ کہہ کر ڈیلیٹ کردیا گیا کہ اس حوالے مزید تفصیلات جلد پیش کی جائیں گی۔ حذف شدہ ٹویٹ کے مطابق یہ پابندی امریکی حکومت کی ہدایت پر عائد کی گئی ہے اور اس کا اطلاق 21 مارچ سے ہوگا۔

screen-shot-2017-03-20-at-18-19

امریکی محکمہ ہوم لینڈ سیکورٹی نے اس بارے میں تبصرہ کرنے سے انکار کردیا ہے۔ بتایا رہا ہے کہ امریکی ٹرانسپورٹیشن سیفٹی ایڈمنسٹریشن کی جانب سے ایک خفیہ ای-میل کے ذریعے یہ حکم نامہ ارسال کیا گیا ہے۔ فضائی اداروں کو اس پابندی پر عملدرآمد یقینی بنانے کے لیے 96 گھنٹوں کا وقت دیا گیا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس اچانک پابندی کی وجہ کسی ممکنہ حملے سے بچاؤ کے لیے حفاظتی اقدامات ہوسکتے ہیں۔ جبکہ کچھ ماہرین کے خیال میں پابندی کی وجہ سمجھ سے بالاتر ہے اور اس سے مسلمان ممالک مین امریکی حکومت کے خلاف رائے عامہ ہموار کرنے والے عناصر کو مدد ملے گی۔ اس پابندی پر تبصرہ کرتے ہوئے ہوابازی کے شعبے سے تعلق رکھنے والے ایک شخص نے بتایا کہ مخصوص فضائی اڈوں کے لیے دیا گیا حکم نامہ جزوقتی ہوسکتا ہے جس کی بنیادی وجہ القاعدہ کی جانب سے حملہ آور ہونے کا خدشہ ہے۔

خیال ظاہر کیا جارہا ہے کہ برقی آلات کے ذریعے دھماکہ خیز مواد امریکا منتقل کیے جانے کا خطرہ ہے۔ یاد رہے کہ اس سے قبل بھی فضائی مسافروں کو برقی آلات ساتھ رکھنے کے لیے اسے آن رکھنا لازمی قرار دیا گیا ہے۔ اس وقت بھی کچھ ایسی ہی وجہ بیان کی گئی تھی کہ برقی ڈیوائسز کے اندر بیٹری کی جگہ پر بم بنانے والا مصالحہ منتقل کیا جاسکتا ہے۔ امریکا کے بعد برطانیہ نے بھی مسافروں پر اسی قسم کی پابندی عائد کی تھی۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں