بیلجیئم میں حلال پر پابندی لگا دی گئی

یورپ کے ملک بیلجیئم کے ایک علاقے میں حلال اور کوشر ذبیحے پر پابندی لگا دی گئی ہے اور حکم دیا گیا ہے کہ جانور کو ذبح کرنے سے پہلے اسے بے ہوش کرنا لازمی ہے۔ ملک کا شمالی علاقہ فلینڈرز وہ پہلی جگہ ہے کہ جہاں یہ پابندی عائد کی گئی ہے جبکہ ستمبر سے یہ والونیا میں بھی لگائی جائے گی۔

جب یہ پابندی تجویز کی گئی تھی تو یورپی یہودی کانگریس نے اسے "نازی قبضے کے بعد یہودیوں کے مذہبی حقوق پر سب سے بڑا حملہ" قرار دیا تھا۔

مسلمانوں کے حلال اور یہودیوں کے کوشر دونوں طریقوں میں جانور کو ذبح کرکے اس کا خون بہنے دیا جاتا ہے۔ اب نئے قانون کے تحت جانور کو ذبح کرنے سے قبل اسے بجلی سے بے ہوش کرنا ضروری ہے جو جانوروں کے حقوق کی تنظیموں کے مطابق حلال اور کوشر سے زیادہ محفوظ طریقہ ہے۔

ملک کی مسلم اور یہودی برادریوں نے اس قانون پر سخت ناگواری ظاہر کی ہے اور اسے یورپی یونین کے آزادئ مذہب کے قانون کی کھلی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔

واضح رہے کہ سوئیڈن، ڈنمارک، سوئٹزرلینڈ اور نیوزی لینڈ میں پہلے ہی بغیر بے ہوش کیے جانور کو ذبح کرنے پر پابندی ہے۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں