کباڑ سے عجائباتِ عالم تیار

چھ ماہ تک بھارت کے چھ آرٹسٹس کاٹھ کباڑ سے دنیا کے سات عجائبات کی نقل تیار کرنے میں مصروف  رہے اور اس دوران حکومت کی 'صاف بھارت' مہم کے تحت کئی شاہکار تخلیق کیے۔ دنیا کے آلودہ ترین شہروں میں شمار ہونے والے دہلی میں بنائے گئے ان فن پاروں میں ہزاروں ٹن کباڑ کا استعمال کیا گیا ہے۔

انتظامیہ نے دو ہیکٹر رقبے پر پھیلے کچرا خانے کو پارک میں تبدیل کرکے یہ فن پارے وہاں نصب کیے ہیں۔ نئی دہلی کے علاقے سرائے کالے خان میں، حضرت نظام الدین میٹرو اسٹیشن سے بمشکل 100 میٹر کے فاصلے پر واقع یہ پارک ممکنہ طور پر ہزاروں افراد کی توجہ اپنی جانب مبذول کروائے گا۔

پارک میں تاج محل، ایفل ٹاور، مجسمہ آزادی، پیسا کے ٹیڑھے مینار، برازیل کے شہر ریو کے مشہور حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے مجسمے، اہرامِ مصر اور روم کے مشہور زمانہ اکھاڑے کولوزیم کے نمونے نصب ہیں۔

51 سالہ یوگش شرما، جو پارک کے قریب چائے کا کھوکھا چلاتے ہیں، افتتاح کے لیے شدت سے منتظر ہیں "اتنی مشہور تعمیرات کو دیکھنا گویا ایک خواب کی تعبیر ہوگا" انہوں نے کہا۔

ان عجائبات کی تعمیر کے لیے تقریباً 60 افراد نے شبانہ روز محنت کی اور اس پر کل ایک ملین ڈالرز لاگت آئی۔ نہ صرف یہ تمام عجائبات کباڑ سے تیار کیے گئے ہیں بلکہ ان کے لیے قمقمے بھی شمسی توانائی سے روشن کیے جا رہے ہیں۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں