جلد شادی ذہنی تناؤ سے بچاتی ہے، تحقیق

جنہیں 20 سال کی عمر کے بعد جلد اپنی محبت مل جاتی ہے اور شادی کر لیتے ہیں وہ ادھیڑ عمر میں بہتر نیند لیتے ہیں اور انہیں ذہنی تناؤ کا سامنا بھی کم کرنا پڑتا ہے۔ یہ انکشاف ایک نئی تحقیق میں ہوا ہے جس کے مطابق سامنے آنے والے نتائج پر کہا جا سکتا ہے کہ شادی قبل از وقت موت کے خطرات کو کم کرتی ہے کیونکہ یہ دماغی کیفیت قبل از وقت کا اہم سبب ہے۔

یونیورسٹی آف منیسوٹا کی حالیہ تحقیق نے پایا ہے کہ نوجوانی کے اوائل میں ہی مثبت اور طویل ازدواجی تعلق پانے والے افراد 32 سال کی عمر کے بعد ذہنی اضطراب کا نشانہ کم بنتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ 37 سال کی عمر تک ان کی نیند کا معیار اچھا ہوتا ہے۔ یہ تحقیق جریدے پرسنل ریلیشن شپس میں شائع ہوئی ہے۔

ٹیم نے 1975-76ء میں پیدا ہونے والے 267 افراد پر تحقیق کی کہ جن سے موجودہ اور حالیہ رومانوی تعلقات کے حوالے سے 23 اور 32 سال کی عمر میں تفصیلی انٹرویو کیے گئے تھے۔ انہوں نے ماضی کے تنازعات بھی بیان کیے کہ ان کے جیون ساتھی نے ان کے ساتھ کیا رویہ اختیار کیا اور ان کا اپنا رویہ کیسا تھا، ساتھ ہی اپنے تعلقات کی پسندیدہ اور ناپسندیدہ باتیں، دوسرے کے احساسات پر اپنا زاویہ نظر اور عام رومانوی تجربات وغیرہ کے سوالات بھی شامل تھے۔ ان سوالوں کی بنیاد پر ایک اسکور ترتیب دیا گیا جس میں زایدہ اسکور کا مطلب ہے کہ زیادہ خیال رکھنے والے، اعتماد کرنے والے اور جذباتی طور پر ایک دوسرے سے زیادہ قربت رکھنے والے جوڑے، جو ایک دوسرے پر اعتماد کرتے ہیں، باوفا ہیں اور دیانت دار بھی۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں