وہ کہ جنہوں نے ایک سے زیادہ مرتبہ آسکرز جیتے

ہالی ووڈ میں کام کرنے والے زیادہ تر اداکاروں اور اداکاراؤں کے لیے اکیڈمی ایوارڈ حاصل کرنا کیریئر کا عروج ہوگا لیکن کچھ اداکار تو ایسے ہیں جن کے لیے ایک آسکر ایوارڈ کافی نہیں تھا۔ ایسے اداکاروں اور اداکاراؤں کی تعداد 41 ہے کہ جنہوں نے اپنے کیریئر میں ایک سے زیادہ مرتبہ آسکر ایوارڈ جیتا۔ پہلا نام اداکارہ لوئز رینر جنہوں نے 1937ء میں اپنا دوسرا آسکر جیتا تھا، کچھ اداکار ایسے ہیں جو جب بھی نامزد ہوئے ہمیشہ جیتے اور کچھ میرل اسٹریپ جیسی اداکارائیں ہیں کہ جو ریکارڈ 21 مرتبہ آسکرز کے لیے نامزد ہوئیں لیکن 4 بار جیتیں۔

اِس سال اکیڈمی ایوارڈز 23 فروری کو منعقد ہوں گے اور پانچ اداکاروں اور اداکاراؤں – مہرشالا علی، کرسچن بیل، سیم روک ویل، ایما اسٹون اور ریچل ویز – کے پاس اپنا دوسرا آسکر جیتنے کا موقع ہوگا۔ آئیے آپ کو ایسے چند اداکاروں کے بارے میں بتاتے ہیں کہ جنہوں نے بہترین اداکار/اداکارہ یا بہترین معاون اداکار/اداکارہ کا آسکر ایوارڈ ایک سے زیادہ مرتبہ جیت رکھا ہے۔

کرسٹو والٹز

آسٹریا میں پیدا ہونے والے اداکار متنازع فلم ساز کوئنٹن ٹیرنٹینو کے ساتھ کافی کام کر چکے ہیں، Inglourious Basterds میں انہوں نے خطرناک نازی کرنل کا کردار ادا کیا تھا جبکہ Django Unchained میں ایک دندان ساز کے بہروپ میں ڈاکٹر کنگ شولٹز کا کردار نبھایا کہ جو اُن افراد کو پکڑتا تھا جن کے سر کی حکومت قیمت لگاتی تھی۔ ان دونوں کرداروں پر والٹز کو بہترین معاون اداکار کے آسکر ایوارڈز ملے تھے۔


کیون اسپیسی

کیون اسپیسی نے دو آسکرز جیتے ہیں ایک 1996ء میں Usual Suspects کے لیے اور دوسرا 2000ء میں American Beauty پر۔ آجکل ایک تنازع میں پھنسنے کی وجہ سے لوگ انہیں بجائے فلموں میں لینے کے، نکال رہے ہیں۔


اینتھنی کوئن

1915ء میں میکسیکو میں پیدا ہونے والے اینتھنی ان پانچ اداکاروں میں شامل ہیں جو لاطینی امریکا سے تعلق رکھتے تھے اور بہترین اداکار کا ایوارڈ جیتا۔ پاکستان اور مسلم دنیا میں انہیں اسلام کے ابتدائی زمانے پر بننے والی فلم The Message اور لیبیا کے ہیرو عمر مختار کی زندگی پر بننے والی Lion of the Desert میں مرکزی کردار ادا کرنے کی وجہ سے جانتی ہے۔


ٹام ہینکس

ٹام نے 1980ء کی دہائی میں متعدد فلموں میں اداکاری کے جوہر دکھائے لیکن انہیں پہلا اعزاز Philadelphia پر ملا جس میں انہوں نے ایک ایڈز کے مریض کا کردار ادا کیا تھا۔ پھر 1995ء میں انہوں نے انتہائی مقبول فلم Forrest Gump میں مرکزی کردار کے لیے بھی آسکر جیتا۔


جوڈی فوسٹر

لوئز  رینر کے علاوہ جوڈی فوسٹر وہ واحد اداکارہ ہیں کہ جنہوں نے 30 سال کی عمر سے پہلے دو آسکرز جیتے۔ 1988ء میں فلم The Accused اور 1991ء میں Silence of the Lambs پر۔


رابرٹ ڈی نیرو

گاڈفادر II میں معاون کردار نبھانے کے بعد رابرٹ ڈی نیرو نے اپنا دوسرا آسکر Raging Bull میں باکسر کے کردار کے طور پر حاصل کیا۔ اپنی باکسنگ صلاحیتوں کو پروفیشنل حد تک پہنچانے کے ساتھ ساتھ انہوں نے کردار کے بوڑھے روپ کے لیے 60 پونڈز وزن بھی بڑھایا تھا۔


مارلن برانڈو

آٹھ مرتبہ اسکرز کے لیے نامزد ہونے والے برانڈو کئی اداکاروں کے آئیڈیل تھے۔ انہوں نے دو مرتبہ ہالی ووڈ کا سب سے بڑا اعزاز جیتا، ایک بار 1954ء میں On the Waterfront پر اور دوسری بار 1974ء میں شہرۂ آفاق The Godfather کے لیے۔ اس فلم میں آسکر جیتنے کے بعد انہوں نے خود اعزاز حاصل کرنے کے بجائے اداکارہ ساچین لٹل فیدر کو اسٹیج پر بھیجا تاکہ وہ امریکا کے حقیقی باشندوں کی فلمی دنیا میں نمائندگی نہ ہونے کے خلاف احتجاج کریں۔


ڈینزل واشنگٹن

ڈینزل واشنگٹن واحد سیاہ فام اداکار ہیں جنہوں نے متعدد بار اکیڈمی ایوارڈز جیتے ہیں۔ ایک بار 1990ء میں Glory میں بہترین معاون اداکار کا اور پھر 2002ء میں Training Day کے لیے۔


جیک نکلسن

چھ مرتبہ آسکرز کے لیے نامزد ہونے کے بعد جیک نے پہلی بار 1976ء میں One Flew Over the Cuckoo’s Nest میں مرکزی کردار اداکار کرنے پر آسکر جیتا۔ جس کے بعد دو مرتبہ مزید یہ اعزاز حاصل کیا، ایک بار Terms of Endearment اور دوسری مرتبہ As Good as It Gets کے لیے۔


ڈینیل ڈے-لوئس

ڈینیل ڈے لوئس واحد اداکار ہیں کہ جنہوں نے بہترین اداکار کا اعزاز تین مرتبہ حاصل کیا ہے۔ My Left Foot کے بعد انہوں نے There Will Be Blood اور Lincoln کے لیے بہترین اداکار کے ایوارڈز جیتے۔


میرل اسٹریپ

میرل اسٹریپ کے لیے آسکر کے لیے نامزد ہونا ایسا ہے جیسا کہ باقی لوگ ڈینٹسٹ کے پاس چیک اپ کروانے کے لیے جاتے ہیں۔ اسٹریپ کا نام ریکارڈ 21 مرتبہ نامزد ہو چکا ہے جن میں سے 17 بار وہ بہترین اداکارہ کے لیے نامزد ہوئیں لیکن جیتا صرف تین بار، پہلی مرتبہ 1980ء میں Kramer vs Kramer کے لیے، دوسری بار 1983ء میں Sophie’s Choice اور آخری بار 2012ء میں Iron Lady پر۔


کیتھرین ہیپ برن

کیتھرین ہیپ برن کسی بھی اداکار سے زیادہ چار مرتبہ آسکرز جیت چکی ہیں، اور سب مرکزی کردار ادا کرنے والی اداکارہ کی حیثیت سے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ انہوں نے اکیڈمی ایوارڈ کی کسی تقریب میں کبھی شرکت نہیں کی۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں