دل کے عارضے کی چند خاموش علامتیں

اگر آپ دن میں عموماً ایک میل تک دوڑ جاتے تھے اور اب آپ کو دوڑنے کے بعد شدید تھکن طاری ہو جاتی ہے تو یہ علامت ہو سکتی ہے دل کے ایک مسئلے کے۔ ڈاکٹروں کے مطابق وہ سرگرمیاں جو آپ کے لیے آسان ہوں لیکن اچانک مشکل ہو جائيں تو اس کا مطلب ہوتا ہے کہ دل جسم کو درکار خون فراہم نہیں کر پا رہا۔ ایسی کون سی علامتیں ہیں کہ جو سامنے آنے کی صورت میں آپ کو فوری طور پر ڈاکٹر سے رابطہ کرنا چاہیے؟ آئیے آپ کو بتاتے ہیں۔

بلند فشارِ خون

ہائی بلڈ پریشر یعنی بلند فشارِ خون  کی تشخیص ہو تو یہ دل کے دورے یا امراضِ قلب کے خطرے کو بڑھا دیتا ہے۔ اگر بلڈ پریشر نیچے نہ آئے تو یہ شریانوں کو نقصان پہنچا سکتا ہے اور شریانیں بند ہونے سے خون کا بہاؤ دھیما پڑ سکتا ہے۔ جب دل مستقل تیزی کے ساتھ آپ کی خون کی شریانوں پر زور ڈالے تو اس سے دل کو زیادہ کام کرنا پڑتا ہے۔

اچانک کھانسی کے دورے

کھانسی کے بارہا دورے پڑنا شروع ہوجائیں تو کبھی یہ سمجھ کر مطمئن نہ ہو جائیں کہ آپ کو ٹھنڈ لگ گئی ہے۔ اگر کھانسی کی ادویات سے بھی کام نہ بنے تو اس کا مطلب ہے کہ یہ دل میں کسی مسئلے کی علامت ہو سکتی ہے۔ ڈاکٹروں کے مطابق کبھی کبھی دل کے مسئلے کی وجہ سے پھیپھڑوں میں رطوبت جمع ہو جاتی ہےتو اس سے کھانسی ہو سکتی ہے، جس سے ایسا لگتا ہے کہ دمّہ یا پھر پھیپھڑوں کی کوئی بیماری ہے جبکہ درحقیقت یہ دل کا مسئلہ ہوتا ہے۔

سوتے ہوئے سانس میں مسئلہ

کبھی کبھار لوگ آدھی رات میں نیند سے اٹھ جاتے ہیں اور انہیں سانس نہیں آ رہا ہوتا، جو دل کی دھڑکن میں بے قاعدگی کی وجہ سے ہو سکتی ہےاور یوں دل کے دورے کے خطرے کو بڑھا دیتی ہے۔ نیند کے دوران سانس نہ آنے کی وجہ سے جسم میں آکسیجن کی کمی ہوجاتی ہے اور خون کی شریانیں سخت ہو جاتی ہیں تاکہ دل اور دماغ کو آکسیجن کی فراہمی بڑھائی جا سکے جس سے سانس گھٹنے لگتا ہے۔ ڈاکٹر اس موقع پر بلڈ پریشر، بلڈ ٹیسٹ اور اسٹریس ٹیسٹ تجویز کرتے ہیں۔

پنڈلیوں پر بالوں کا  ختم ہو جانا

ٹانگیں بالیں سے محروم ہو جانے کا مطلب یہ ہو سکتا ہے کہ شریانیں سکڑنے کی وجہ سے آپ کے جسم میں آکسیجن کی کمی ہو گئی ہے جس سے خون کا بہاؤ کم ہو گیا ہے۔ خون کی وجہ سے بال کی  جڑیں بڑھ نہیں پاتی اور وہ گر جاتے ہیں۔ بہتر یہ ہے کہ آپ تشخیص کے لیے ڈاکٹر کے پاس جائیں۔

پیروں اور ٹانگوں میں سوجن

صبح کام پر جانے سے پہلے جوتوں میں پیروں ڈالنے میں دشواری ہو یا موزے پہننے میں، یہ بھی علامت ہو سکتی ہے دل کے مسئلے کی۔ جب آپ کا دل اچھی طرح خون فراہم نہیں کرپاتا تو رگیں جسم کے ٹشوز میں اضافی رطوبتیں بھیجتی ہیں جس سے پیر، ٹانگیں اور پیٹ سوج سکتے ہیں۔

گردن اور جبڑے میں تکلیف

بہت سے لوگ سمجھتے ہیں کہ سینے کا درد دل کے مسائل کی پہلی علامت ہے، لیکن حقیقت یہ ہے کہ دل کے مرض کی علامتیں جسم کے مختلف حصوں پر ظاہر ہو سکتی ہیں۔ جیسا کہ انجائنا کا درد گردن، جبڑے، کمر اور کندھوں میں بھی محسوس ہو سکتا ہے۔

فیس بک پر تبصرے



تبصرہ کریں